’بھاجی اپنی جیب وچ ہتھ پائو‘

0
87

تحریر: عطاءالحق قاسمی
رات کو گیارہ بجے جب جھنگ سے تابوت جیسی شکل وصورت والی بس لاہور روانہ ہوئی تو مجھے جتنے کلمے یاد تھے وہ میں نے دل ہی دل میں پڑھ لئے۔اس بس کو ڈھائی بجے شب لاہور پہنچنا تھا۔چنانچہ میرا خیال تھا کہ تین ساڑھے تین گھنٹے کی نیند بس میںکرلوں گا اور نیند کی دوسری ”قسط“ گھر پہنچ کر ”ادا“ کر لوں گا مگر جب بس اسٹارٹ ہوئی تو میں اس نتیجے پر پہنچ چکا تھا کہ باقی سب کچھ ہوسکتا ہے اس بس میں نیند نہیں ہو سکتی۔گیٹ کے برابر والی سیٹ کا سپورٹنگ راڈ ٹوٹا ہوا تھا بلکہ کئی دفعہ ٹوٹا ہوا تھا اور اس دفعہ تو اس کی ویلڈنگ بھی اکھڑی ہوئی تھی۔
چنانچہ بس کے اسٹارٹ ہوتے ہی اس ٹوٹے ہوئے راڈ نے جلترنگ کی طرح بجنا شروع کر دیا اگر معاملہ یہیں تک محدود رہتا تو شاید جلترنگ، نیند آور ثابت ہوتا مگر ڈرائیور نے گانوں کی کیسٹ بھی آن کر دی تھی۔اگر گانوں کی یہ ٹیپ ”چج“ کی ہوتی تو شاید مجھے نیند آ جاتی مگر اللہ جانے اس ٹیپ میں کون مظلوم قید تھا کیونکہ کثرت استعمال سے آواز بھی نہیں پہچانی جا رہی تھی بلکہ یہ اندازہ لگانا بھی ممکن نہیں تھا کہ جو آواز ہم سن رہے ہیں وہ گانے کی ہے یا گانے والی کی ہے اس کے علاوہ بس کے اندر کی تمام بتیاں ڈرائیور نے آن کر رکھی تھی جن کی موجودگی میں نیند آنا خاصا محال تھا۔ان سب چیزوں سے میں نے یہ اندازہ لگایا کہ دراصل نیند ڈرائیور کو آئی ہوئی ہے اور یہ سارا ماحول اس نے صرف خود کو جگانے کے لئے پیدا کیا ہے۔غالباً اپنی نیند ہی پر قابو پانے کے لئے وہ تنگ سی سڑک پر بس کو فل اسپیڈ پر دوڑا رہا تھا اور”مور اوور“ یہ کہ اس اسپیڈ پر بس چلاتے ہوئے وہ گردن موڑ کر کنڈیکٹر کو ہدایات بھی دیتا تھا میری نشست بس کے بائیں جانب والے پہیے کے عین اوپر واقع تھی چنانچہ رہی سہی کسر ان جھٹکوں سے پوری ہو رہی تھی جو ہر دو منٹ بعد میرا مقدر بنتے تھے چنانچہ میں نے اپنا سر کھڑکی کے شیشے کے ساتھ ٹکا لیا لیکن تھوڑی ہی دیر بعد مجھے اپنا سر بھی ”واپس“ لینا پڑا کیونکہ قدرے زور دار جھٹکے کی صورت میں سر ان دو راڈوں میں سے کسی ایک کے ساتھ جا ٹکراتا تھا، جو اس شیشے پر سے گزر رہےتھے۔اس پر میں نے دائیں جانب سرکنے کی کوشش کی مگر سیٹ اس قدر تنگ تھی کہ میرے ذرا سے دباﺅ سے دوسرا مسافر سیٹ پر سے گرتے گرتے بچا چنانچہ اس نے برا سا منہ بنا کر کہا بھاجی !آرام نال بیٹھو اب میرے لئے نیند تو کجا سکون سے بیٹھنے کے تمام راستے بھی مسدود ہو چکے تھے چنانچہ میں نے سگریٹ نکالنے کےلئے جیب میں ہاتھ ڈالا تو برابر والے مسافر نے ایک بار پھر برا سا منہ بنایا اور کہ ”بھاجی اپنی جیب وچ ہتھ پاﺅ“میں نے شرمساری کے عالم میں ”سوری“ کہا اور پوری احتیاط کے ساتھ اپنی جیب میں ہاتھ ڈال کر سگریٹ کی ڈبیا نکالی مگر تلاش بسیار کے باوجود ماچس نہ مل سکی، چنانچہ میں نے بادل ناخواستہ اپنے ہم نشست سے ماچس مانگی اور اس نے باد ناخواستہ جیب میں ہاتھ ڈال کر ماچس نکالی اور میری پھیلی ہوئی ہتھیلی پر رکھ دی میں نے محسوس کیا کہ وہ بھی میری ہی طرح بیزار ہے کیونکہ یہ سفر وہ بھی سہولت سے کرنا چاہتا ہے۔مگر اس کی نشست بھی بس کے اسی پہیے پر واقع ہے جہاں پر میری نشست ہے۔ٹوٹے ہوئے راڈ کی کھڑکھڑاہٹ ناہموار سڑک، پرشور گانوں، گھسی ہوئی کیسٹ بس کے اندر روشن تیز بتیاں اور ڈرائیور کی بے اختیار ڈرائیونگ اسے بھی اتنا ہی ڈسٹرب کر رہی تھی جتنا کہ میں ہو رہا تھا میں نے سگریٹ سلگا کر ماچس اسے واپس کی اور کش لگاتے ہوئے کھڑکی کے شیشے سے باہر کی طرف جھانکا مگر بس میں سے نکلتی ہوئی روشنیوں کے دائرے سے آگے اندھیرا ہی اندھیرا تھا۔
بس فیصل آباد پہنچ چکی تھی ،جھنگ سے روانہ ہوتے ہوتے کنڈیکٹر نے مسافروں کو یقین دلایا تھا کہ یہ بس براہ راست لاہور تک جائے گی مگر اب وہ مسافروں کو دوسری بس میں بٹھا رہا تھا کہ اس کا کہنا تھا بس خراب ہو چکی ہے۔دوسری بس کے حالات بھی دگرگوں تھے یہاں بھی پرشور گانوں کی گھسی ہوئی کیسٹ بس کے اندر روشن تیز بتیاں ناہموار سڑک اور ڈرائیور کی بے احتیاط ڈرائیونگ مسافروں کی نیند اڑائے ہوئے تھی اس بس کے مسافر بھی بس پر نہیں بس کے پہیوں پر سفر کر رہے تھے اور اس دفعہ جو میرا ہم نشست تھا وہ خود ہی بے چین نہیں تھا اس کی مرغیاں بھی خود کو سخت بے چین محسوس کر رہی تھیں جن کی ”نشست“ اس مسافر کے پاﺅں میں تھی تھوڑی تھوڑی دیر بعد نیند کے غلبے کی وجہ سے اس کا پاﺅں کسی کی گردن پر جا پڑتا اور بس کے دوسرے شور کے علاوہ ان بے زبانوں کی فریاد بھی سنائی دیتی ہم جھنگ سے رات کوگیارہ بجے روانہ ہوئے تھے اور اصولاً ہمیں ڈھائی بجے لاہور پہنچ جانا چاہئے تھا مگر اس وقت صبح کے چار بج چکے تھے اور منزل کا دور دور تک کوئی پتہ نہیں تھا، آسمان پر کالی گھٹائیں چھائی ہوئی تھیں اور بجلی بار بار چمک رہی تھی تھوڑی ہی دیر بعد بارش شروع ہو گئی اور لگتا تھا یہ بارش بس کے باہر نہیں بس کے اندر ہو رہی ہے کیونکہ بارش کا پانی بس کی کھڑکیوں کے علاوہ چھت سے بھی ٹپکنا شروع ہو گیا تھا
چنانچہ بے آرام مسافروں کی بے آرامی میں مزید ا ضافہ ہو گیا تھا۔میرے ہم نشست مسافر کے پاﺅں میں بیٹھے ہوئے مرغوں کی کڑکڑاہٹ بھی بڑھ گئی تھی اور انہوں نے گھبرا کر بانگیں دینا شروع کر دی تھیں۔باہر دن کی روشنی طلوع ہو چکی تھی مگر رات بھر جاگے ہوئے مسافروں کی آنکھوں کے سامنے اندھیرا ہی اندھیرا تھا یہاں سے لاہور سات آٹھ میل دورتھا اور بس ایک دفعہ پھر خراب ہو گئی تھی بس میں بیٹھے ہوئے مرد ، عورتیں، بچے، بوڑھے ایک بار پھر ٹوٹے ہوئے جسموں کے ساتھ اٹھے اور تھکے قدموں کے ساتھ بس میں سے نکل کر سڑک پر آ گئے۔ان کے اعصاب شل ہو چکے تھے بارش ان کے سروں پر برس رہی تھی اور وہ ایڑیاں اٹھا کر کسی نئی بس کا انتظا کر رہے تھے کسی ایسی بس کا جس کا ڈرائیور انہیں ان کی گم گشتہ منزل تک پہنچا دے۔
بشکریہ: روزنامہ جنگ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here