چاردناں دی زندگی،،، مرحوم کو واجب الادا رقم اس کے انتقال کے بعد کہاں خرچ ہوسکتی ہے؟ مسئلہ کا حل جانئے

0
58

لاہور(علامہ غلام نبی رضاعی ) زندگی کا کوئی بھروسہ نہیں، دنیا داری کے معمول کے کاموں میں مصروف چلتا پھرتاشخص اگلے ہی لمحے دنیا سے رخصت ہوجاتاہے لیکن اس کے معاملات ادھورے رہ جاتے ہیں، جن میں مالی لین دین بھی شامل ہے ،انتقال کی صورت میں عمومی طورپر مشرقی معاشروں میں مرحوم کے ذمے واجب الادا رقم ان کے لواحقین ادائیگی کا اعلان کردیتے ہیں لیکن اگر اسے کسی سے رقم لینی ہوتو شریعت کی رو سے واجب الادا رقم کون وصول کرسکتاہے یا پھر اللہ کی راہ میں ہی دے دینی چاہیے ؟؟؟ اس مسئلے کا جواب مولاناڈاکٹرعبدالرزاق سکندرنے دیدیا۔انہوں نے بتایاکہ قرض خواہ کے انتقال کے بعد یہ رقم اس کے ورثاءکا حق ہے، انہیں ہی رقم کی ادائیگی ہونی چاہیے لیکن اگر مرحوم کے ورثاءیا لواحقین میں سے کوئی نہ ملے تو پھر یہ رقم مرحوم کی طرف سے کسی مسلمان کو صدقہ میں دی جاسکتی ہے ۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here