کیا آپ کو معلوم ہے کہ ٹیم میں ایک بغاوت کی وجہ سے ہی عمران خان کو کپتانی ملی تھی

0
57
revealed-how-imran-khan-become-captian-of-pakistan-cricket-team

لاہور(پاکستان 247نیوز) سنہ انیس سو اسی میں بھارت سے سیریز ہارنے پر پاکستان کرکٹ ٹیم کو کپتانی کا مسئلہ درپیش آگیا تھا اور عارضی طورپر مشتاق احمد کی تجویز پر جاوید میاں داد کو کپتان اور مشتاق محمد کو ٹیم منیجر بنا دیا گیا تاہم ظہیر عباس اور ماجد خان سمیت ٹیم کے سینئر کھلاڑیوں نے یہ فیصلہ تسلیم نہیں کیا لیکن کارکردگی غیرتسلی بخش رہنے کی وجہ سے خاموش رہے۔ انیس سو اکیاسی میں سری لنکن ٹیم پاکستان کے دورے پر آئی تو جاوید میاں داد کو دوبارہ کپتان بنا دیا گیا لیکن اب کی بار سینئر کھلاڑیو ں نے بغاوت کردی۔ ماجد خان نے 9 کھلاڑیوں کو اپنے گھر بلایا اور انہیں بتا یا کہ وہ میاں داد کی کپتانی میں کھیلنے کو تیار نہیں،باقی کھلاڑیوں نے بھی اْن کے ساتھ اتفاق کیا۔ ان میں محسن خان، عمران خان، سکندر بخت، سرفراز نواز، مدثر نذر، وسیم باری اور وسیم راجہ شامل تھے لیکن بورڈ نے باغیوں کی بجائے جاوید میاں داد کا ساتھ دینے کا فیصلہ کیا، بورڈ کے ڈٹ جانے کی وجہ سے ماجد خان اور سکندر بخت کے علاوہ باغی کھلاڑی دوبارہ کھیلنے کے لئے تیار ہو گئے۔ معاملات زیادہ بگڑے تو جاوید میاں داد نے استعفیٰ دے دیا لیکن شرط رکھی کہ وہ کسی کو بھی کپتان تسلیم کر سکتے ہیں لیکن ماجد خان کو نہیں۔ اس پر بورڈ نے عمران خان کو کپتان مقرر کر دیا، پھر اسی کپتان کی قیادت میں ٹیم میں نہ صرف نئے کھلاڑی شامل ہوئے بلکہ کئی کامیابیاں اپنے نام کیں، 1992ء کا ورلڈ کا بھی جیت کر لائی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here