کی بورڈ پر حروت تہجی ترتیب کے بجائے بے ترتیب کیوں ہوتے ہیں؟

0
77
keyboard keys

کراچی(پاکستان247نیوز)آج کل کی بورڈکا استعمال عام ہو گیا ہے۔ ہم میں سے تقریباً ہر ایک دن میں اسے کئی دفعہ استعمال کر تا ہے پھر چاہے وہ موبائل فون کا کی بورڈ ہو یا دفتر یا گھر میں کمپیوٹر کا۔ شاید آپ نے کبھی غور کیا ہو کہ کی بورڈ پر حروف تہجی اپنی ترتیب کے مطابق کیوں نہیں ہوتے۔

شاید یہ بات آپ کے علم میں نہ ہو مگر موجودہ کی بورڈ کو QWERTY کہا جاتا ہے جوکہ کی بورڈ کی اوپروالی لائن کی بائیں سے دائیںجانب کے چھ الفاظ مشتمل ہے۔موجودہ کی بورڈ کو 1870 کی دہائی میں کرسٹوفر لیتھم شولز نے ایجاد کیا تھالیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ انہوں نے الفاظ کو کی بورڈ کے لے آو¿ٹ میں حروف تہجی کی ترتیب کے بجائے بے ترتیب کیوں رکھا؟دنیا کے پہلے کی بورڈ کا پیٹنٹ 1868 میں درج کرایا گیا تھا جس کا کی بورڈ پیانو کی کیز (Keys) کی طرح انگریزی حروف تہجی کی ترتیب کے مطابق تھالیکن بہت زیادہ استعمال ہونے والے حروف ایک دوسرے کے بہت زیادہ قریب ہونے کی وجہ سے اس کی کیز اکثر جام ہوجایا کرتی تھیں۔ لہذا اندازہ یہ کیا جاتا ہے کہ اس مشکل کو دیکھتے ہوئے کرسٹوفرشولز نے موجودہ QWERTY کی بورڈ تیار کیا، جس میں زیادہ استعمال ہونے والے الفاظ کو ایسی ترتیب دی گئی ہے کہ جس سے زیادہ استعمال والے الفاظ آپ کی انگلیوں کے قریب ترین ہوں۔اس کے بعدشولز نے ایک کمپنی ریمنگٹن کے ساتھ معاہدہ کیا جس نے اس کی بورڈ کو اپنے مقبول ٹائپ رائٹر ریمنگٹن نمبر ٹو کا حصہ بنایا۔
لیکن ا س کے متعلق 2 محققین متضاد خیال پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ شروع میں ٹائپ رائٹرز کو ٹیلی گراف آپریٹرز استعمال کرتے تھے جو مورس کوڈ میں موصول پیغام کو تحریر کرتے ہوئے درست حروف تہجی پر مبنی کی بورڈ پر ٹائپ کرتے ہوئے الجھن کا شکار ہوجاتے تھے جس کی وجہ سے کی بورڈ کو موجودہ ترتیب سے بنایا گیا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here